Posted on January 20, 2009 by

Allah Buhat Bara Hai!

سب نے یہی کہا ہے اللّھ بہت بڑا ہے
قرآن میں لکھا ہے اللّھ  بہت بڑا ہے

ہر حد سے ماورا ہے اللّھ بہت بڑا ہے

یہ مہر و ماہ و انجم، دریائوں میں طلاطم
چلتی  ہوئی  ہوائیں ،  آواز  کا   ترنّم
خوش رنگ طائروں کا پھیلا ہوا طبسّم
ترتیب وار غنچے جیسے کہ رشکِ انجم

یہ کْن کا معجزہ ہے، اللّھ بہت بڑا ہے

مٹی کے پیکروں میں تحریک  ڈالتا ہے
سوئے فلک زمیں سے تارے اچھالتا ہے
پاتال  سے جواہر وہ  ہی  نکالتا  ہے
پروردگار وہ ہے ،  دنیا کو پالتا  ہے

ہر حد سے ماورا ہے اللّھ بہت بڑا ہے

کونین میں عیاں ہے یارب جو نور تیرا
ہے تاب کس نظر میں ، دیکھے ظہور تیرا
تسبیح خواں ہم کیا ، ہے کوہِ طور تیرا
جس کو بہی مل گیا ہے مولا شعور تیرا

وہ مصطفٰی ہوا ہے، اللّھ بہت بڑا ہے

تو  باکمال   جیسا ،  ویسے  تیرے  پیمبر
سب تیرے مدح خواں ہیں، سب ہی تِرے ثناء گر
کیا  بادشاہ و قدسی  ،  کیا  مفلس و گداگر
ان  ساری  ہستیوں  میں  وہ  آمنہ  کا  دلبر

وہ بھی تو لب کشا ہے، اللّھ بہت بڑا ہے

قوسین کی تھی منزل ، حیران انبیاء تھے
جبرئیل رک گئے تھے اِک مرحلے پہ آکے
رستے  بنائے  تو نے پردے ہٹا ہٹا کے
معراج پر محمد پہنچے تِری رضا سے

اِک شور گونجتا ہے، اللّھ بہت بڑا ہے

اللّھ  کی بڑائی یوں تو سبھی نے کی ہے
لیکن  جو  کربلا  کی  تاریخ   بولتی   ہے
نوکِ سناں سے رب کی توثیق ہو چکی ہے
تکبیر  زیرِ خنجر  شبّیر   نے   کہی   ہے

مظلوم کی سدا ہے، اللّھ بہت بڑا ہے

کس نے کیا ہے سجدہ  خنجر تلے جہاں  میں؟
کانٹے پڑے  ہوئے تھے جب پیاس سے زباں میں
جب  آگ  لگ رہی تھی  زہرا کے گلستاں  میں
چھپ چھپ کے چاند تارے روتے تھے آسماں میں

مولا نے تب کہا ہے، اللّھ بہت بڑا ہے

کیا    نفسِ مطمئنہ    سجّاد    نے    تھا   پایا
اِک اِک ستم پہ جس نے سجدے میں سر جھکایا
طوقِ گراں  پہں  کر  شکوہ  نہ   لب  پہ  لایا
کنبے  کو  اپنے  لیکر  تا  شام  تھا   جو  آیا

ہر گام پر کہا ہے’ اللّھ بہت بڑا ہے

سینے پہ برچھی کھا کے اکبر نے یہ صدا دی
یہ آخری  ہے منزل خوشنودیءِ خدا  کی
خاکِ شفا  بنا  دی  کرب و بلا  کی   مٹی
بولے  ریحان و سرور   تاریخِ کربلا   بھی

مولا Ù†Û’ سچ کہا ہے’ اللّھ بہت بڑا ہے

Selected verses from Nadeem Sarwar’s “Allah Buhat Bara Hai”.

Written by Rehan Aazmi.